ShareThis

Saturday, December 3, 2011

ادھورے سپنے - آخری قسط


گڈو کو دفن کیا جا چکا ہےاوراب محلے کی مسجد کے امام صاحب انتہائی عجزوانکساری سے گڈوکیلئے دعا مانگ رہے ہیں۔ آسمان پر بادل اورگہرے ہوچکے ہیں۔ ننھےگڈوکی موت پرآسمان کا سینہ بھی غم سے پھٹ پڑاہےاوروہ بھی مسلسل روئےچلاجارہا ہے۔ وقفے وقفےسے بادل یوں گرجتے ہیں جیسے کوئی بوڑھیا اپنے جوان بیٹے کی موت پرنوحہ کررہی ہوں۔ گہرے کالے بادل اس قدر نیچےآچکےہیں گویا وہ پرانے قبرستان میں اپنی چھوٹی سی قبر میں پرسکون سوئے ہوئے گڈوکا آخری دیدارکرنا چاہتے ہوں۔۔۔۔۔ جیسے کہ وہ ننھے گڈو کا خوبصورت ماتھا چوم لینا چاہیتے ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔ محبت وایثار سے سرشارکسی ماں کی طرح۔۔۔۔۔۔!!


لوگ دعا کے بعدآہستہ آہستہ کچی بستی کی طرف روانہ ہوچکے ہیں اورتھوڑی دیر کےبعد قبرستان خالی ہوجاتا ہے۔ ننھے گڈو کی قبرپر کسی خدا ترس انسان نے سرخ گلاب کی پتیاں ڈال دی ہیں۔

شام کا اندھیرا، کالے بادلوں کے ساتھ مل کر دھیرے دھیرے قبرستان کو تاریک کر رہا ہے اور اب بوندوں کے ساتھ ساتھ سردہواؤں کے جھکڑ بھی چل رہے ہیں۔ شام کے اندھیرے میں تیز ہواؤں سے ننھے گڈو کی قبرسے گلاب  کی پتیاں اُڑاُڑکر اِدھر اُدھرپھییل گئی ہیں۔۔۔۔۔۔ اچانک تاریک اور ویران قبرستان ننھے گڈو کی آواز سے گونج اُٹھتا ہے ۔۔۔۔۔ یوں لگتا ہے کہ گڈو چیخ چیخ کر کہہ رہا ہو،" ماں۔۔۔۔۔ ماں۔۔۔۔۔ مجھے بھوک لگی ہے ماں ۔۔۔۔ ماں مجھے روٹی دو!۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ماں، آج تو نے مجھے گیند کیلئے بیس  روپےدوگی ناماں۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟ ماں دیکھو تم نے وعدہ کیا تھا ۔۔۔۔۔۔؟  ماں مجھے روٹی دو۔۔۔۔۔ ماں مجھے گیند دو۔۔۔۔۔ ماں مجھے روٹی دو۔۔۔۔۔ ماں مجھے روٹی دو۔۔۔۔۔
ماں۔۔۔۔۔۔۔۔ماںںںںںںںںںںںںں
*************************




یہ تھا ۔۔۔۔۔۔اختتام۔۔۔۔۔۔۔گڈو کی دردناک کہانی کا

0 تبصرے:

Post a Comment

اردو میں تبصرہ پوسٹ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کر دیں۔