ShareThis

Saturday, September 5, 2009

15 comments:

  1. ماشاءاللہ بہت ہی اچھی تحریر ہے

    ReplyDelete
  2. ماشاءاللہ بہت ہی اچھی تحریر ہے

    ReplyDelete
  3. بھت تکلیف دہ باتیں ھیں
    میں تو بلکل بے بہرا تھا ان سب خبروں سے۔

    ReplyDelete
  4. بھت تکلیف دہ باتیں ھیں
    میں تو بلکل بے بہرا تھا ان سب خبروں سے۔

    ReplyDelete
  5. اللہ تعالٰی آپکے علم و مرتبہ میں اضافہ فرمائے۔

    ReplyDelete
  6. اللہ تعالٰی آپکے علم و مرتبہ میں اضافہ فرمائے۔

    ReplyDelete
  7. کیا یہ ضروری تھا کہ اپنا نقطہ نظر بیان کرنے سے پہلے اپنے مخالفین کی اس طرح تذلیل اور بے عزتی کی جاتی اور انہیں چھوٹے سروں والی مخلوق سے تعبیر کیا جاتا۔ کالم نگار کی اس حرکت کی وجہ سے مخالفین کے سر چھوٹے نہیں ہوئے بلکہ ان کا سر چھوٹا ہو گیا ہے جس میں گالی گلوچ کے علاوہ کچھ بھی بھرا ہوا نہیں‌ہے۔

    ReplyDelete
  8. کیا یہ ضروری تھا کہ اپنا نقطہ نظر بیان کرنے سے پہلے اپنے مخالفین کی اس طرح تذلیل اور بے عزتی کی جاتی اور انہیں چھوٹے سروں والی مخلوق سے تعبیر کیا جاتا۔ کالم نگار کی اس حرکت کی وجہ سے مخالفین کے سر چھوٹے نہیں ہوئے بلکہ ان کا سر چھوٹا ہو گیا ہے جس میں گالی گلوچ کے علاوہ کچھ بھی بھرا ہوا نہیں‌ہے۔

    ReplyDelete
  9. افضل اگر لکھنے والے کے لکھنے سے کوئی فرق نہ پڑا تو جناب کے تبصرے سے بھی کوئی فرق نہیں پڑا :razz:
    بیٹھے تڑپا کریں ایسے سچ تو اب بار بار سننے کو ملیں گے جب ننگ ناچ کیئے ہیں تو ان کو سننے کا بھی حوصلہ ہونا چاہیئے ابھی تو صرف رؤف کلاسرا نے لکھا ہے ابھی تو اور بھی لوگ اٹھیں گے اور سچ بولیں گے خوشی سے یا مجبوری سے

    ReplyDelete
  10. افضل اگر لکھنے والے کے لکھنے سے کوئی فرق نہ پڑا تو جناب کے تبصرے سے بھی کوئی فرق نہیں پڑا :razz:
    بیٹھے تڑپا کریں ایسے سچ تو اب بار بار سننے کو ملیں گے جب ننگ ناچ کیئے ہیں تو ان کو سننے کا بھی حوصلہ ہونا چاہیئے ابھی تو صرف رؤف کلاسرا نے لکھا ہے ابھی تو اور بھی لوگ اٹھیں گے اور سچ بولیں گے خوشی سے یا مجبوری سے

    ReplyDelete
  11. حیدرآبادی صاحب ابھی تو ابتداء ہے وہاں آپ ہندوؤں کے ہاتھوں ستائے گئے تو یہاں اردو بولنے والے سو کالڈ مسلمان بھائیوں کے ہاتھوں ظلم و ستم کا شکار ہوئے :evil:

    ReplyDelete
  12. حیدرآبادی صاحب ابھی تو ابتداء ہے وہاں آپ ہندوؤں کے ہاتھوں ستائے گئے تو یہاں اردو بولنے والے سو کالڈ مسلمان بھائیوں کے ہاتھوں ظلم و ستم کا شکار ہوئے :evil:

    ReplyDelete
  13. جی حیدرآبادی صاحب ابھی تو ابتداء ہے، وہاں آپ ہندوؤں کے مظالم کا شکار ہوئے تو یہاں اردو بولنے والے اپنے ہی سو کالڈ مسلمان بھائیوں کے ظلم اور زیادتیوں کے جنہیں سب سے زیادہ تکلیف ہی یہی ہے کہ اول تو اتے نہ اور آہی گئے تھے تو غلاموں کی طرح منہ بند کر کے ہماری غلامی کرتے برادران یوسف کے واقعے کو سچ ہوتے دیکھا ہے اور اس پر طرہ یہ کہ شرمندگی اب بھی نہیں لوگ گردنیں اکڑائے گھوم رہے ہیں اور مرنے والوں کا مزاق اڑا رہے ہیں،

    ReplyDelete
  14. جی حیدرآبادی صاحب ابھی تو ابتداء ہے، وہاں آپ ہندوؤں کے مظالم کا شکار ہوئے تو یہاں اردو بولنے والے اپنے ہی سو کالڈ مسلمان بھائیوں کے ظلم اور زیادتیوں کے جنہیں سب سے زیادہ تکلیف ہی یہی ہے کہ اول تو اتے نہ اور آہی گئے تھے تو غلاموں کی طرح منہ بند کر کے ہماری غلامی کرتے برادران یوسف کے واقعے کو سچ ہوتے دیکھا ہے اور اس پر طرہ یہ کہ شرمندگی اب بھی نہیں لوگ گردنیں اکڑائے گھوم رہے ہیں اور مرنے والوں کا مزاق اڑا رہے ہیں،

    ReplyDelete
  15. اس تحریر کی ابتداء ناشائستگی اور اختتام صدر زرداری کی چمچہ گیری پر کیا گیا ہے سو اسے سنجیدگی سے لینا حماقت ہے۔ ویسے ایک بات خوب ہے۔ ہم میں سے ہر کوئی اپنی ذات، اپنے لسانی گروہ، اپنی سیاسی جماعت کی بالادستی چاہتا ہے اور اسے پاکیزہ قرار دینے پر مصر ہے۔ سچ اور انصاف سے ہمیں‌مجموعی طور پر چِڑ ہے۔
    افلا تبصرون؟

    ReplyDelete